ویسٹ انڈیز کے خلاف سیریز، پی ایس ایل فائنل جیسا طریقہ کار اپنایا جائے گا، ناصر pakvwl

کراچی: صوبائی وزیر ناصر حسین شاہ نے کہا ہے کہ کراچی میں پی ایس ایل کے بعد ویسٹ انڈیز کے تین میچز ہورہے ہیں، پی ایس ایل فائنل جیسا طریقہ کار اپنایا جائے گا۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا، ناصر حسین شاہ نے کہا کہ شائقین کے لیے پارکنگ ایریا بنائے گئے ہیں، شٹل سروس بھی ہوگی، گرمی کی وجہ سے وقت بارہ کے بجائے تین سے سات بجے تک رکھا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پی ایس فائنل نے میڈیا نے ہمارا ساتھ دیا شکریہ ادا کرتے ہیں، ہمیں پھر میڈیا کی سپورٹ کی ضرورت ہے، پوری کوشش کریں گے کہ اس بار عوام کو زحمت نہ ہو۔

ممنونہ اشیا اسٹیڈٰیم میں لانے پر پابندی ہوگی، بریگیڈیئر شاہد

اتوار یکم اپریل سے ویسٹ انڈیز کے خلاف ہونے والے سیریز کے حوالے سے بریگیڈیئر شاہد کا کہنا ہے کہ ممنوعہ اشیا کو اسٹیڈٰیم میں لانے پر پابندی ہوگی، کھانے پینے کی اشیا کو اسٹیڈیم میں لانے پر پابندی ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ شاپنگ بیگز چھوٹے استعمال کئے جائیں تاکہ سیکیورٹی کلیئرنس میں آسانی ہو، سیکیورٹی پی ایس ایل کے ماڈل جیسی اپنائی جائے گی، جبکہ حکومت سے درخواست ہے کہ اسٹیڈیم کے اندر فوڈ اسٹالز کی تعداد میں اضافہ کیا جائے۔

بریگیڈیئر شاہد نے کہا کہ سیکیورٹی معاملات پر بھرپور توجہ دی گئی ہے، دوپہر تین بجے سے لے کر 7 بجے تک اسٹیڈیم کے گیٹ کھلے رہیں گے، اسپتال کے قریب سے شٹل سروس ڈراپ کرکے اسٹیڈیم کے قریب لانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

سڑکیں 11 کے بجائے 2 بجے بند ہوں گی، ڈی آئی جی ٹریفک

میچز کے دوران سڑک بند کرنے کے حوالے سے ڈی آئی جی ٹریفک کا کہنا ہے کہ ٹریفک پلان پی ایس فائنل جیسا ہی ہے البتہ سڑکیں بند کرنے کے اوقات میں تبدیلی کی ہے، سڑکیں 11 کے بجائے 2 بجے بند ہوں گی۔

ڈی آئی جی ٹریفک نے شہریوں سے اپیل کی کہ شارع فیصل اور شارع پاکستان کو ٹریفک کے لیے زیادہ سے زیادہ استعمال کیا جائے۔

واضح رہے کہ پاکستان اور ویسٹ انڈیز کے درمیان تین ٹی ٹوئنٹی میچز کی سیریز کا پہلا میچ یکم اپریل کو کھیلا جائے گا، دوسرا اور تیسرا میچ 2 اور 3 اپریل کو نیشنل اسٹیڈیم کراچی میں ہوگا، پاکستان کی ٹیم نے پریکٹس سیشن کا آغاز کردیا ہے جبکہ ویسٹ انڈیز کی ٹیم آج رات کراچی پہنچے گی۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Source by [author_name]

اپنا تبصرہ بھیجیں